آرمی چیف جنرل باجوہ نے قومی سلامتی پالیسی کو سراہتے ہوئے اسے 'بہترین قدم' قرار دیا 20

آرمی چیف جنرل باجوہ نے قومی سلامتی پالیسی کو سراہتے ہوئے اسے ‘بہترین قدم’ قرار دیا

چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ۔ — اے ایف پی/فائل
  • جنرل باجوہ قومی سلامتی پالیسی کے اجراء کی تقریب میں میڈیا سے غیر رسمی گفتگو کر رہے ہیں۔
  • انہوں نے پالیسی کو “عظیم قدم” قرار دیتے ہوئے ملک کی قومی سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے اٹھائے گئے اقدامات کو سراہا۔
  • وہ کہتے ہیں، “ملٹری سیکورٹی قومی سلامتی کی پالیسی کا ایک پہلو ہے۔

اسلام آباد: چیف آف آرمی اسٹاف (سی او اے ایس) جنرل قمر جاوید باجوہ نے جمعہ کو قومی سلامتی پالیسی کے اجراء کو سراہتے ہوئے اسے “بہت بڑا قدم” قرار دیا۔

یہ بیان ملک کی پہلی قومی سلامتی پالیسی 2022-2026 کے اجراء کی تقریب میں میڈیا سے غیر رسمی گفتگو کے دوران سامنے آیا، جیو نیوز اطلاع دی

میڈیا سے بات کرتے ہوئے، جنرل باجوہ نے ملک کی قومی سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے ریاست کی طرف سے اٹھائے گئے اقدامات کی تعریف کی اور اس پالیسی کو “بہت اچھا قدم” قرار دیا۔

پالیسی کے بارے میں بات کرتے ہوئے ان کا مزید کہنا تھا کہ ملٹری سیکیورٹی نیشنل سیکیورٹی پالیسی کا ایک پہلو ہے۔

سی او اے ایس نے یہ بھی کہا کہ اس دستاویز سے ملک کی قومی سلامتی کو یقینی بنانے میں مدد ملے گی۔

وزیر اعظم عمران خان نے جمعہ کو ملکی پالیسی کے عوامی ورژن کا آغاز کرتے ہوئے کہا کہ “قوم اب صحیح سمت میں جا رہی ہے۔”

“پالیسی کا اصل ورژن درجہ بند رہے گا، لیکن دستاویز کا عوامی ورژن جاری کیا جائے گا،” وزیر اعظم نے کہا، ریڈیو پاکستان.

وزیر اعظم نے پالیسی کے اجراء کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نئی پالیسی میں قومی سلامتی کو “صحیح انداز میں” بیان کیا گیا ہے، کیونکہ پاکستان کی یک جہتی سوچ ہے: “ہمیں صرف فوجی سیکورٹی کی ضرورت ہے”۔

وزیر اعظم نے کہا کہ پاکستان میں یک جہتی ذہنیت غالب ہے کیونکہ ہمیں 1948 اور 1965 میں ہندوستان کے خلاف جنگوں کی وجہ سے “عدم تحفظ” کا سامنا تھا۔

انہوں نے مسلح افواج کو بھی خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ ملک کو مسلسل دہشت گردی کے خطرے کے باوجود پاکستان کی سیکورٹی فورسز نے جس طرح دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑی، وہ قابل تعریف ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ریاست کی سب سے بڑی سیکیورٹی اس کے عوام ہوتے ہیں۔ جب عوام ملک کے اسٹیک ہولڈر بن جاتے ہیں تو یہ سب سے بڑی قومی سلامتی بن جاتی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں